Pak Updates - پاک اپڈیٹس
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

حمزہ صاف پانی کمپنی کے ٹھیکوں پر اثرانداز ہوئے :نیب جواب

لاہور (شکیل سعید ) نیب نے رمضان شوگر ملز، صاف پانی کمپنی اورمنی لانڈرنگ کیسز میں حمزہ شہباز کے خلاف جوابات ہائیکورٹ میں جمع کرا دئیے ۔ نیب نے اپنے جواب میں کہا کہ حمزہ شہباز نے بغیر کسی عہدے کے صاف پانی کمپنی کی میٹنگ کی صدارت کی،ان کی میٹنگ میں موجودگی سے منصوبے کے ٹھیکوں پراثر انداز ہونے کے شواہد ملے ہیں۔ رمضان شوگرملزکیس میں حمزہ شہباز نے اختیارات سے تجاوز کیا۔ نیب نے حمزہ شہباز کے آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات بھی ہائیکورٹ میں جمع کرادیں جس کے مطابق حمزہ شہباز کے اکاؤنٹ میں 2005سے 2008تک 18کروڑ روپے بیرون ملک سے ٹرانسفر ہوئے اور وہ ان کا جواب نہیں دے سکے ۔ نیب نے یورپین ایشین ٹریڈنگ کارپوریشن کی تفصیلات میں بتایا کہ اس میں سلمان شہباز ،ربیعہ عمران بھی شیئرزہولڈر ہیں۔نیب نے میاں ٹریڈنگ پرائیویٹ میں بھی حمزہ شہباز ودیگر کے شیئر زکی تفصیلات جمع کرا دیں۔میاں ٹریڈنگ میں حمزہ ،سلمان شہباز،نصرت شہباز،طارق دستگیر،عابدرسول شیئرز ہولڈرز ہیں۔ شریف فرید ملز میں حمزہ شہباز،سلمان شہباز،طارق دستگیر،عابدرسول جبکہ رمضان انرجی لمیٹڈ میں حمزہ شہباز،سلمان شہباز،نصرت شہباز،طارق دستگیر شیئرہولڈرہیں۔شہباز شریف اور ان کے بچوں کے اثاثوں کی 1999 میں کل مالیت 50 ملین تھی، حمزہ شہباز نے 2001 میں 22 ملین کے اثاثے ظاہر کئے جو 2017 میں 411 ملین ہو گئے ۔وہ 388 ملین کے اثاثے جائز ثابت نہیں کر سکے ۔انہوں نے اثاثے جائز ثابت کرنے کے لیے 180 ملین بیرون ملک سے آمدن ظاہر کی جو جعلی ثابت ہوئی۔ان کے اثاثے اور فیکٹریاں ذرائع آمدن سے زیادہ ہیں۔ حمزہ شہباز نے ان ذرائع کو چھپانے کے لیے منی لانڈرنگ کی، شہباز شریف کی فیملی کو وراثت میں صرف رمضان شوگر ملز ملی۔ حمزہ شہباز نے اپنے بھائی سلمان شہباز اور والدہ نصرت کے ساتھ مل کر 11 فیکٹریاں لگائیں، شہباز شریف فیملی کے اثاثے 2008 میں 683 ملین ہو گئے جو ان کے معلوم ذرائع سے کہیں زیادہ ہیں۔ 2017 میں اثاثے 3.3 ارب ہو گئے جس کے ذرائع معلوم نہیں ہو سکے

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More