Pak Updates - پاک اپڈیٹس
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

پنجاب میں ایڈز پھیلنے کی بڑی وجہ اتائیت،ڈی جی خان سر فہرست

لاہور دوسرے ،فیصل آباد تیسرے نمبر پر،رجسٹرڈمریضوں کی تعداد ساڑھے 12 ہزار
لاہور(سید سجاد کاظمی سے ) پنجاب میں 90فیصد ایڈز کا مرض اتائیت کے باعث پھیلا جبکہ 2 سٹیک ہولڈرادارے سٹی گورنمنٹ اورپنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن اتائیت پر قابو پانے میں تاحال ناکام ہیں۔ پنجاب میں ڈی جی خان ایڈز میں سر فہرست، دوسرے نمبر پرلاہور اور تیسری بڑی تعداد فیصل آباد میں رپورٹ ہوئی ہے ۔تفصیل کے مطابق پنجاب کے 36اضلاع میں ایچ آئی وی، ایڈز کے رجسٹرڈ مریضوں کی تعدادساڑھے بارہ ہزار بتائی جارہی ہے اور پس پردہ ان کا علاج و معالجہ جاری ہے مگر اس کے برعکس اقوام متحدہ کی رپورٹ2018کے مطابق ملک میں ایک لاکھ50ہزار جبکہ پنجاب میں یو این او کے اندازے کے مطابق تعداد55ہزار ہے ۔ اب تک پنجاب میں تین بڑے بریک آؤٹ میں چنیوٹ، سرگودھا اور جلال پور جٹاں میں ایڈز پھیلنے کی وجہ اتائیت سامنے آئی تھی۔ڈی جی خان میں مریضوں کی تعداد 2800 ،لاہور میں2100 اور فیصل آباد میں 1200 رپورٹ ہوئی ۔ میڈیکل ماہرین نے پنجاب میں ایڈز کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ اتائیت قرار دی ہے اور سندھ میں بھی گرفتار ڈاکٹر سرنج کے ذریعے ایڈز پھیلانے میں مصروف پایا گیا ۔ ذرائع نے الزام عائد کیا سابق چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی ریٹائر منٹ کے بعد حکومتی اداروں نے اتائیت کے خلاف آپریشن سست کردیا ہے ۔یہ الزام بھی عائد ہے کہ ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسرز ہیلتھ کا عملہ اتائیوں سے منظم طریقہ سے پیسے وصول کرکے انہیں نظر انداز کررہا ہے جس کی وجہ سے اتائیوں کی تعداد میں خاطر خواہ کمی واقع نہیں ہوسکی ۔ پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن کے ترجمان عامر وقاص نے کرپشن کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا آج تک ہیلتھ کیئر کمیشن کی ٹیم کی کرپشن کاکوئی کیس سامنے نہیں آیا بلکہ ہم نے اب تک19ہزار254اتائیوں کے اڈے سیل کئے ہیں اور یہ سلسلہ ابھی تک جاری ہے ۔ پنجاب ایڈز کنٹرول پروگرام کے ترجمان سجاد حفیظ نے اپنے موقف میں بھی ایڈز کے پھیلاؤ کی بڑی وجہ اتائیت کو قرار دیا اور کہا جب تک اتائیت پر سخت آپریشن نہیں کیا جاتا صورتحال بہتر ہونا مشکل ہے ،بیشتر کوالیفائیڈ ڈاکٹروں کو استعمال شدہ سرنج اور زنگ آلود طبی آلات دوبارہ استعمال کرتے دیکھا گیا ہے ۔ ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل ڈاکٹر سلمان کاظمی کا کہنا ہے پنجاب ہیلتھ کیئر کمیشن کو درخواست د ی ہے کہ اتائیت کے خلاف آفیسرز کو سنجیدہ کرنے کے لئے فیلڈ سٹاف کو مراعات دی جائیں۔ چیف ایگزیکٹیو آفیسر ہیلتھ اتھارٹی لاہور ڈاکٹر آغا توحید کا موقف ہے روزانہ کی بنیادوں پر ڈپٹی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر آپریشن کرتے ہیں ان کی کرپشن کے بارے کبھی کوئی شکایت سامنے نہیں آئی، ویسے بھی ان آفیسرز کے پاس اور بھی ذمہ داریاں ہیں روزانہ صرف ایک دو گھنٹے اتائیت کے خلاف آپریشن کیا جاتا ہے

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More