Pak Updates - پاک اپڈیٹس
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

وزارت ہائوسنگ نے فیڈرل لاج میں 5صحافیوں سے فیملی سوٹ خالی کر الئے

اسلام آ باد ( نیوز رپورٹر،خصوصی نامہ نگار) وزارت ہا ئوسنگ و تعمیرات نے فیڈرل لاج اسلام آ باد میں مقیم پانچ صحافیوں سے گھر خالی کرالئے ہیں ۔ یہ فیملی سوٹ پولیس کی مدد سے جمعرات کے روز خالی کرائے گئے ۔ ان سوٹس میں شاہد ، حیدر ، محسن ، زاہداور صدیق مقیم تھے ۔دریں اثناء وزارت ہائوسنگ کی طرف سے سرکاری فلیٹس اور فیڈرل لاج میں رہائش پذیرپانچ صحافیوں سے فلیٹ خالی کروا لئے گئے جبکہ تین صحافیوں نے اتوار تک فلیٹ خالی کرنے کی مہلت لے لی۔ وزارت ہائوسنگ کی درخواست پر اسسٹنٹ کمشنرڈاکٹر فیصل سلیم نے بدھ کی شام ایک نوٹس جاری کیا تھا جس میں رہائش پذیر اخبار نویسوں کو خبردار کیا گیا تھا کہ وہ سرکاری فلیٹ میں بغیر الاٹمنٹ غیرقانونی طور پر مقیم ہیں لہٰذا فوری طور پر فلیٹ خالی کریں،مگر مثبت رسپانس نہ ملنے پر اسسٹنٹ کمشنر نے سیکرٹریٹ پولیس سے مدد طلب کرلی جبکہ دوسری طرف سے نیشنل پریس کلب صدر شکیل قرار اور پی ایف یو جے کے صدر پرویز شوکت صحافیوں سے گھر خالی کرانے کے اقدام کے خلاف ڈٹ گئے اور اسے چادر اور چار دیواری کا تقدس پامال کرنے کا اقدام قرار دیا۔ مزاحمت پر پولیس نے شاہد کو حراست میں لے کر تھانے منتقل کردیا جس پر ایک درجن کے قریب صحافیوں نے تھانے کےباہر دھرنا بھی دیا۔ایس ایچ او تھانہ سیکرٹریٹ کا موقف ہے کہ پولیس نے
کوئی زیادتی نہیں کی، صورتحال کو خراب ہونے سےبچانے کےلئے شاہد کو تھانے منتقل کیاگیا جسے بعد میں باعزت طور پر چھوڑ دیاگیا۔ایس ایچ او نےکہا کہ غیر سرکاری طورپر رہائش پذیر اخبار نویسوں کےخلاف شکایت کرنے والوں نے وفاقی وزیر ہائوسنگ سے استفسار کیا تھا کہ جو صحافی پارلیمنٹ لاجز میں رہ رہے ہیں وہ کس قانون کے تحت رہ رہے ہیں، پی آر اے کے سیکرٹری اطلاعات علی شیر نے فلیٹ خالی کرانے کے اقدام کو غیرقانونی اور قابل مذمت قرار دیا۔نیشنل پریس کلب کےعہدیداروں نے بھی جبری فلیٹ خالی کرانے کے اقدام کی مذمت کی ہے اورانہوں نے کہا کہ جو جرنلسٹ اب بھی غیرقانونی طور پر سرکاری گھروں میں مقیم ہیں ان سے بھی فلیٹ خالی کروائے جائیں ،سٹیٹ کا ایکشن بلا تفریق ہوناچاہیے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More