Pak Updates - پاک اپڈیٹس
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

بھارتی انتخابات میں دولت اور جرائم کی دنیاکا آپس میں گہرا رشتہ

کراچی(جنگ نیوز)بھارت کے 17ویں لوک سبھا کے انتخابات اختتامی مراحل کی جانب گامزن ہیں، سات انتخابی مراحل میں سے پانچ مکمل ہوچکے ہیں، چھٹا مرحلہ12مئی کو ہونے جارہا ہے۔انتخابات کے چھ مراحل کے امیدواروں کی دولت اور جرائم کی تفصیلات منظر عام پر آچکی ہیں۔ایسوسی ایشن فار ڈیموکریٹک ریفارمز(اے ڈی آر) کی رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ بھارتی انتخابات میں دولت اور جرائم کی دنیاکا آپس میں گہرا رشتہ ہے۔چھ انتخابی مراحل میں2012کروڑ پتی اور1339مجرمانہ مقدمات کے حامل امیدوار ہیں۔ پہلے مرحلے میں401،دوسرے میں427، تیسرے میں392، چوتھے میں306اورپانچویں میں184کروڑ پتی امیدواروں نے حصہ لیا جب کہ چھٹے میں311کروڑپتی حصہ لیں گے۔مجرمانہ مقدمات کے حوالے سے امیدواروں کی تفصیل یوں ہے کہ پہلے مرحلے میں146،دوسرے میں107، تیسرے میں570،چوتھے میں201اور پانچویں میں126مجرمانہ ریکارڈ اور مقدمات کے حامل امیدواروں نے انتخابات میں حصہ لیا اور چھٹے مرحلے میں189امیدوار میدان میں ہیں جن کے خلاف فوجداری مقدمات درج ہیں۔بھارت میںعام انتخابات کے پہلے مرحلے کے تحت 11اپریل کو20 ریاستوں میں 91 پارلیمانی حلقوں میں ووٹ ڈالے گئے۔ یہاں1279 امیدواروں نے حصہ لیا۔ ان میں17 فی صد کے خلاف کوئی نہ کوئی فوجداری مقدمہ درج تھا۔ایسوسی ایشن فار ڈیموکریٹک ریفارمز(اے ڈی
آر) کی رپورٹ کے مطابق پہلے مرحلے میں امیدواروں کے حلف ناموں کے مطابق146 کے خلاف سنگین جرائم کے ریکارڈ ہیں،دس کے خلاف قتل،اورپچیس کے خلاف اقدام قتل کے مقدمات درج ہیں۔پہلے مرحلے میں امیدواروں میں 401نے ایک کروڑ سے زائد مالیت کے اثاثوں کا ذکر کیا۔جن میں69 امیدواریعنی83فی صد کا تعلق کانگریس اور65امیدوار یعنی 78فی صد کا تعلق بی جے پی سے تھا۔ پہلے مرحلے میں امیر ترین اور غریب ترین امیدوار ریاست تلنگا کے ایک ہی حلقے سے آمنے سامنے تھے،امیرترین امیدوار کے اثاثے8ارب95کرورڑ روپے جب کہ غریب ترین امیدوار کے اثاثے صرف پانچ سو روپے ے تھے۔دوسرے مرحلے کے انتخابات18اپریل کو گیارہ ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقے پڈوچیری میں 95پارلیمانی نشستوں پرہوئے ۔1596امیدواروں نے حصہ لیا۔ اس میں27فی صد کروڑ پتی تھے۔گیارہ فی صد امیدواروں کے اثاثوں کی مالیت پانچ کروڑ یا اس سے زائد تھی،427امیدواروں کے اثاثوں کی مالیت ایک کروڑ یا اس سے زائد اور41فی صد کے اثاثے دس لاکھ روپے یا اس سے کم تھے۔دوسرے مرحلے میں امیدوار وں کیاوسط اثاثے تین کروڑ نوے لاکھ روپے بنتے ہیں۔ دوسرے مرحلے میں23فی صد یعنی107 امیدوار فوجداری یا مجرمانہ ریکارڈ کے حامل تھے،17 پر سنگین نوعیت کے مقدمات درج تھے۔ان میں38فی صد بی جے پی،33فی صد بہوجن سماج پارٹی اور اور25فی صد کانگریس کے امیدوار شامل ہیں۔ تیسرے مرحلے کے انتخابات23اپریل کو ہوئے جس میں15ریاستوں کے117حلقوں میں ووٹ ڈالے گئے، اس میں1612امیدواروں نے حصہ لیا جن میں570پرکریمنل کیسز درج تھے،ان میں40کا تعلق کانگریس،38کا بی جے پی سے ہے14 امیدوار عدالتوں سے سزا یافتہ ہیں ۔ 13امیدواروں کے خلاف قتل کے مقدمات درج ہیں۔ تیسرے مرحلے میں392امیدواروں کی ذاتی دولت کروڑوں میں ہے۔ہر امیدوار اوسطاً دوکروڑ95لاکھ مالیت کے اثاثوں کا مالک ہے۔ بھارتی انتخابات کا چوتھا مرحلہ29اپریل کو9ریاستوں کی72 نشستوں پر ہوا،چوتھے مرحلے میں943امیدواروں نے حصہ لیا، ان میں23فی صد یعنی201امیدواروں کے خلاف مجرمانہ مقدمات درج تھے۔37حلقوں میں ہر ایک حلقے میں تین یا اس سے زائد پر فوجداری مقدمات تھے۔ چوتھے مرحلے میں306امیدوار کروڑ پتی تھے۔ اس مرحلے میں ہر امیدوار کی اوسط دولت چار کروڑ53لاکھ روپے ہے۔ گیارہ فی صد پانچ کروڑ یا اس سے زائد، دس فی صد امیدوار دو سے پانچ کروڑ روپے کے حامل،21فی صد پچا س لاکھ سے دو کروڑ روپے کے مالک تھے۔بھارتی انتخابات کے پانچویں مرحلے کی پولنگ سات ریاستوں میںچھ مئی کو ہوئی، 51حلقوں میں674امیدواروں نے حصہ لیا۔19فی صد یعنی126امیدواروںکے خلاف مجرمانہ مقدمات درج ہیں،جن میں22امیدواروں کا تعلق بی جے پی،14کا کانگریس اور نو کا بھوجن سماج پارٹی ہے۔ پانچویں مرحلے میں184امیدوار کروڑ پتی تھے جن میں38کا تعلق بی جے پی،45کانگریس اور باقی دیگر جماعتوں سے ہے۔نو فیصد امیدواروں کی دولت پانچ کروڑ یا اس سے زائد،9فی صد کی دو سے پانچ کروڑ،21فی صد کی50لاکھ سے دو کروڑ روپے ہے،32فی صد کی دس لاکھ سے کم ہے۔چھٹے مرحلے کے انتخابات 12مئی کو چھ ریاستوں اور ایک مرکز کے ماتحت علاقے میںہونے جارہے ہیں۔59حلقوں میں979 امیدوار مقابلہ کریں گے۔189امیدواروں کے خلاف فوجداری مقدمات درج ہیں جو چھٹے مرحلے کے امیدواروں کا 20فی صد بنتا ہے۔ ان میں54کا تعلق بی جے پی،20کا نگریس،19کا تعلق بھوجن سماج پارٹی سے ہے۔چھٹے مرحلے میں311امیدوار کروڑ پتی ہیں، اوسطاً ہر امید وار تین کروڑ41لاکھ روپے مالیت کے اثاثوں کا مالک ہے۔ ان میں 46امیدواروں کا تعلق بی جے پی،37کا کانگریس ،31کا بی ایس پی ،چھ کا اے پی پی سے ہیں۔ گیارہ فی صد امیدواروں کی دولت5کروڑ سے اس سے زائد، گیارہ فی صد دو کروڑ سے پانچ کروڑ روپے،23فی صد امیدوار پچاس لاکھ سے دو کروڑ روپے اثاثو کے مالک ہیں،صرف27فی صد امیدواروں کی دولت دس لاکھ سے کم ہے۔ انتخابات کا ساتواں اور آخری مرحلہ19مئی کو ہوگااور نتائج کا اعلان23کو کیا جائے گا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More