Pak Updates - پاک اپڈیٹس
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

‘کشمیریوں سے پیار کرنے کا وقت آگیا ہے’:مختار عباس نقوی

بھارتیوں کو کشمیری عوام سے محبت کرنی چاہیے۔دہلی کی سوشل اینڈ پولیٹیکل ریسریچ فانڈیشن نے 'جموں و کشمیر اور لداخ میں ترقی کے لیے چلینجز' کے عنوان پر ایک کانفرنس کا انعقاد مختار عباس نقونی

نئی دہلی،28 جنوری, ساوتھ ایشین وائر( نیوزڈیسک ) : بھارتی مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے کہا کہ بھارتیوں کو کشمیری عوام سے محبت کرنی چاہیے۔دہلی کی سوشل اینڈ پولیٹیکل ریسریچ فانڈیشن نے ‘جموں و کشمیر اور لداخ میں ترقی کے لیے چلینجز’ کے عنوان پر ایک کانفرنس کا انعقاد کیا گیا تھا۔ مختار عباس نقونی نے اس کانفرنس کے دوران ان باتوں کا اظہار کیا۔
ساوتھ ایشین وائر کے مطابق انہوں نے کہا کہ ‘ہمیں صرف کشمیر سے محبت ہے، لیکن اب کشمیریوں کو اپنا ماننے اور ان سے پیار محبت کرنے کا وقت آ گیا ہے’۔بھارتی مرکزی وزیر نے کہا کہ ‘ میں نے 21 جنوری کو کشمیر کا دورہ کیا اور کئی دن سرینگر میں رہا۔ میں نے مثبت تبدیلیاں دیکھی۔ دفعہ 370 کی منسوخی کے بعد لوگ خوش ہیں اور مطمئن بھی ہیں۔ وہاں کے پشتینی باشندوں نے مودی سرکار کے اس اقدام کا خیرمقدم کیا ہے اور اب بہتر سیاحت کے خواہاں ہیں۔ گزشتہ 5 ماہ کے دوران وادی میں ہوئے نقصانات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔
ساوتھ ایشین وائر کے مطابق کانفرنس کے پہلے سیشن کے دوران بورڈ آف ٹرسٹیز، ایس پی آر ایف کے رکن یشونت را دیشمکھ نے کہا کہ دفعہ 370 کی منسوخی کے بعد سیاحتی شعبے میں تقریبا 15 ہزار کروڑ روپے کا نقصان ہوا ہے۔یشونت را دیشمکھ کے اس بیان پر اتفاق کرتے ہوئے مرکزی وزیر نے کہا کہ “جب میں نے وادی کا دورہ کیا تو ڈل جھیل کے قریب سیاح موجود تھے ۔ لیکن لوگوں کے تاثرات کے پتا چلا کہ وادی میں اس سے پہلے کبھی بھی محفوظ ماحول نہیں تھا اور اب آنے والے دنوں میں سیاحت کو فروغ دینا ہوگا’۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق انہوں نے دعوی کیا کہ کشمیری عوام نے انہیں بتایا کہ گزشتہ 4 ماہ سے وہ اپنے آپ کو محفوظ محسوس کررہے ہیں۔ دہشت گردی کا خاتمہ ہوچکا ہے اور کشمیر میں تبدیلی کے بارے میں مثبت پیغام دینے کی ضرورت ہے’
ساوتھ ایشین وائر کے مطابق دفعہ 370 کی منسوخی کے 6 ماہ بعد مرکزی وزرا نے 18 سے 24 نومبر تک جموں و کشمیر کا دورہ کیا اور وہاں عام لوگوں سے بات چیت کی۔دفعہ 370 کی منسوخی کے تقریبا 6 ماہ بعد مرکزی وزرا کی 36 رکنی ٹیم نے عوامی رابطہ مہم کے تحت 18 سے 25 جنوری تک جموں و کشمیر کا دورہ کیا اور وہاں مقامی لوگوں سے بات چیت کی۔ مختار عباس نقوی بھی اس ٹیم کا حصہ تھے اور تقریبا 2 روز سرینگر میں رہے۔
اپنے دورے کو مثبت قرار دیتے ہوئے انہوںنے کہا تھا کہ کشمیر کے سبھی علاقے تیزی سے نارملسی کی طرف گامزن ہیں۔کشمیر میں ترقی کو یقینی بنانا مزکری حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا تھا: جموں و کشمیر اور لداخ میں لیہہ اور کرگل کے لوگوں کے حقوق بالکل محفوظ ہیں۔ ان کے حقوق پر کوئی ڈاکہ نہیں ڈال سکتا۔ لوگوں میں غلط فہمیاں پیدا کی جارہی ہیں۔ یہ غلط فہمیاں شرارتی عناصر کی جانب سے پیدا کی جارہی ہیں۔ لوگوں نے افواہیں اڑائی ہیں کہ جائیدادوں پر دوسری ریاستوں کے لوگ قابض ہوں گے، ایسا کچھ ہوگا نہیں’۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More